Thursday, 4 June 2015

"بےقرار"

پَرتَوِ یار سے بجھ گئی ، شمعِ آفتاب
اِس سَیلِ نُور کی کوئی کیسے لائے تاب

آمد ہے فصلِ لالہ کی ہر ساز نغمہ بار
محتاجِ دستِ غیر رہے چنگ نہ رُباب

دِل تَک رہا ہے پھر سے اُسی بے وفا کی راہ
پیماں شکن جو ایسا کہ شرمائے ہے حباب

کیسے گزر رہی ہے ترے بعد کیا کہیں
کوئی ترجمانِ حال ہو کیا ، جُز ماہئ بے آب

مشتاقِ دید آنکھوں میں لئے خواب بے قرار
مستور حسنِ یار پسِ صد چلمن و نقاب

4جون 2015

No comments:

Post a Comment