Tuesday, 26 May 2015

"اساس کیا ہے "

رہروانِ رہِ وفا کی اساس ہی کیا ہے

دریدہ دامن و دل اور خیال شوریدہ

بس اک نگاہ تھی کافی نہ تم سےوہ بھی ہوئی

تمام عمر رہے گریہ کناں و نم دیدہ 

  فروری9 ۔2015۔

۔۔۔۔۔۔۔۔

تمہارے حُسن کا ، مہتاب بام پر نکلا

شرابہ ، اور دلِ وحشی کا ہو گیا ہے دو چند

تمہارے قُرب کی خواہش ہی غیر فطری ہے

کبھی ، لگا نہیں مخمل میں ٹاٹ کا پیوند 

  مارچ 26 ۔۔2015۔

۔۔۔۔۔۔

سکوتِ شب میں ابھر آیا تیری یاد کا چاند
وہ چاندنی کہ ہر اک داٖغ دل فروزاں ہے
عنایتیں تری اس درجہ ہم پہ ہیں جاناں
بکار اب تو ہمیں ، علاجِ بُخلِ داماں ہے

12 مئی 2015

No comments:

Post a Comment