Thursday, 31 October 2013

"قلزم ِدرد"

قلزمِ درد ، بے کراں ھے آج
اے مرے دوست تو کہاں ھے آج
کل کلاں تم بھی جان لو شاید
بے کلی دل کی جو نہاں ھے آج
حاکمِ شہر کی نِرالی دَھج
قررتِ حق سے بے نشاں ھے آج
نعرہِ مست ، تیرے مجنوں کا
اور بھی تند اور جواں ھے آج
ھائے وہ قصہ اپنی چاھت کا
ایک گم گشتہ داستاں ھے آج
آپ نے بنیاد جس کی ڈالی تھی
خیر سے درد وہ جواں ھے آج
زندگی یوں بھی کچھ سہل نہ تھی
تیرے بعد اور بھی گراں ہے آج
عطائے یار دلِ تار تار رقیب کی خیر
جس پہ بے مہر ، مہرباں ھے آج
سارے بدلاؤ اک تری نظر کے سبب
جو فقط سود تھا ، زیاں ھے آج
آپ کی پے بہ پے عنایت سے
جوئے خوں آنکھ سے رواں ھے آج
 ستمبر 19، 2013


Wednesday, 30 October 2013

"ملاقات"

وہ گاہ گاہ ملاقات بھی نہیں اب تو
بس اِک طویل توقف ہے اور ہجر کی رات
گزار دی کسی صورت ،ولے اے جانِ قرار
بڑی اُداس ،ترے بعد تلخ تر تھی حیات
 ستمبر17 ،2013  


Tuesday, 29 October 2013

" عروس ِسخن "

"ایک بہت ہی بے وفا کے نام "


  تم مِری 'نین" میرے نین  بھی تھیں          

غبار ِخاطرِشاعربھی،دل کا چین بھی تھیں         


 تمہارے  دم سےہی، تھا احمریں عروسِ سُخن

 تمہارے دم سےہی، گلشن بھی رنگ ِگلشن بھی

 تمہاری دید کہ تھی ،آمد ِبہار کے رنگ

 تِری تراوٹ کو، اُترتی تھی شب کو شبنم بھی 

 تِرے جمال سے ،تھے مستعار، جتنے تھے 

خیال حُسن کے ،خوبی کے ،ابر ساون بھی 

خیالِ شعر سی،تم شاعروں کے ذہن سی تھیں               

   غبارِخاطر ِشاعر بھی ،دل کا چین بھی تھیں              

 تمہارے ساتھ ، گئے زندگی کے سارے رنگ 

 نہ اب خیال کی وسعت ،نہ رنگِ روئے سُخن 

یوں بال کھولے گُزرتی ہے اب تو بادِنسیم

 کہ بوئےگُل کو، ترستا ہے آج صحنِ چمن

 ترے نثار،  پلٹ کر اگر نگاہ کرے 

تو کِھل اُٹھیں مِرے چار سوگُلاب وسمن

 بے سمت راہِ محبت میں قبلتین سی تھیں                 

 غبار ِخاطرِشاعر بھی دل کا چین بھی تھیں                


 تم مِری"نین" میرے نین بھی تھیں   

غبارِخاطرِشاعر بھی دل کا چین بھی تھیں  

ستمبر16 ،2013

 



Monday, 28 October 2013

" لمحے"

تمہارے ساتھ کٹے زندگی کے وہ لمحے
جو مِری زیست میں اِک بار پھرپلٹ آئیں
تو اس حسیں بدن سے گلاب ہونٹوں سے
کسی طور نہ بچھڑیں لپٹ کے مرجائیں  
ستمبر 16، 2013

Friday, 25 October 2013

"سنگدل"

" سنگدل"

کبھی میں سوچتا ہوں تم

 نہ اتنی سنگدل ہوتیں تو

 تمہاری اس بھری دُنیا کے

 خوش آسا و خواب آگیں 

طرب خانے میں میں بھی پل

کو خوش رہتا

 کہ خوش ہوتا

 مگر ۔۔۔۔۔ 

تم سوچتی ہو گی 

اگر میں جی گیا پھر سے

 تو کیسے کہہ سکو گی کہ 

تم نے ایک آدم زاد 

اپنی بے پناہ خوش کن

 صورت  پر ہے یوں وارا 

کہ وہ ہے زیست تک ہارا

 ستمبر 21، 2013

" تتلی"

 "محبت "

 محبت خوشنما تتلی 
کے رنگوں سے مشابہ ہے
جسے چھونے
جسے پانے
کی خواہش جب مچلتی ہے
قدم خود اٹھنے لگتے ہیں
کسی بے نام و نشاں منزل
کے لا حاصل تعاقب میں
کہ جو دھوکہ تو ہوتی ہے
مگر منزل نہیں ہوتی
جو دِکھنے میں تو لگتی ہے
مگر ساحل نہیں ہوتی
جسے پانے کی خواہش ہو
تو یہ حاصل نہیں ہوتی 
جو دیوانہ تو کرتی ہے
پہ خود پاگل نہیں ہوتی
زر و سیم و جواہر بِن
کبھی گھائِل نہیں ہوتی
تہی دامن ہم ایسوں پر
ذرا مائِل نہیں ہوتی
مگر
جانِ جہاں تم نے
کبھی سوچا نہیں ہو گا
محبت کرنے والوں کو
محبت ہو ہی جاتی ہے
یہ وہ کنجی ہے قسمت کی
جو قصداً کھو  دی جاتی ہے  
 2013، 23 ستمبر